"""'''''""غزل"""""""

Go down

"""'''''""غزل"""""""

Post by Mr.TaRaR on Wed Dec 20, 2017 12:56 pm

جو گزر جاتا ہے لمحہ نہ خریدا جائے
عمر رفتہ کا وہ میلہ نہ خریدا جائے

ہم تھے نکلے کہ زمانہ کی لگائیں بولی
اپنے حصے کا بھی حصہ نہ خریدا جائے

تھا نشہ ایسا کہ ٹھوکر پہ سمندر رکھا
اب یہ عالم ہے کہ قطرہ نہ خریدا جائے

سب شجر کاٹ دئے بیچ دئے لیکن اب
دھوپ آئی ہے تو سایہ نہ خریدا جائے

ہم وہ فرہاد جو ممکن کریں ہر ناممکن
بس مصیبت ہے کہ تیشہ نہ خریدا جائے

دل کا سودا تو کیا پہلی نظر نے اس کی
اب مُکرتے ہیں بقیہ نہ خریدا جائے

کیسے نکلے گا کوئی سوچ ترے چُنگل سے
یادِ ماضی ، ترا پہرہ نہ خریدا جائے

رات کہتی ہے کہ اب نیند نہیں آئے گی
ان کے خوابوں کا جو تکیہ نہ خریدا جائے

یہ محبت بھی سمجھ لو ہے مصیبت ایسی
اپنے رقبے کا ہی قبضہ نہ خریدا جائے

بات کرنے کا سلیقہ نہیں ابرک آیا
لفظ سیکھے ہیں تو لہجہ نہ خریدا جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ااتباف ابرک
avatar
Mr.TaRaR
Super Moderater
Super Moderater

Posts : 12
Join date : 2017-11-11
Age : 16

Back to top Go down

Back to top


 
Permissions in this forum:
You cannot reply to topics in this forum
Copyright© 2017 ITDunya.Net. All rights reserved.Powered By iTMasTER